Yeh Baat Munkashif Hui Chairag Ke Baghair Bhi

یہ بات منکشف ہوئی چراغ کے بغیر بھی

یہ بات منکشف ہوئی چراغ کے بغیر بھی

میں ڈھونڈ لوں گا ہر خوشی چراغ کے بغیر بھی

ہوا تھا جس جگہ کبھی وصال یار دوستو

ہے اس جگہ پہ روشنی چراغ کے بغیر بھی

لکھی گئی ہیں جس کے ساتھ زندگی کی منزلیں

وہ آ ملے گا آدمی چراغ کے بغیر بھی

مسرتوں کے قافلے لٹا رہی ہے پھر مجھے

تری یہ خود سپردگی چراغ کے بغیر بھی

میں تذکرہ کروں تو کیا کروں جمال یار کا

دمک رہی تھی دل کشی چراغ کے بغیر بھی

تمہاری ایک یاد بے شمار حسرتوں کے رنگ

نگاہ میں سجا گئی چراغ کے بغیر بھی

گلہ کسی سے کیوں کروں گزر ہی جائے گی خیالؔ

یہ مختصر سی زندگی چراغ کے بغیر بھی

رفیق خیال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(327) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rafique Khayal, Yeh Baat Munkashif Hui Chairag Ke Baghair Bhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rafique Khayal.