Jab Se Jana Hai Gham E Zeest Se Hasil Kiya Hai

جب سے جانا ہے غم زیست سے حاصل کیا ہے

جب سے جانا ہے غم زیست سے حاصل کیا ہے

میں یہی سوچ رہا ہوں متبادل کیا ہے

خواب آنکھوں میں بسائے تو ہوئی یہ خواہش

کوئی ہم سے بھی یہ پوچھے کہ غم دل کیا ہے

لوگ ہر قید سے آزاد ہوئے جاتے ہیں

پوچھئے کس سے کہ اب کار سلاسل کیا ہے

کس کو فرصت ہے کرے ہم کو جو زندہ ثابت

بس یہی ایک وکیل اپنا ہے قاتل کیا ہے

نقش معدوم ہوئے جاتے ہیں رفتہ رفتہ

اے خدا آج مری راہ میں حائل کیا ہے

آئنہ خانے میں یہ دیکھ رہا ہوں راحتؔ

مختلف کیا ہے یہاں اور متمثل کیا ہے

راحت حسن

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(368) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rahat Hasan, Jab Se Jana Hai Gham E Zeest Se Hasil Kiya Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rahat Hasan.