Woh Anjuman Ho Ke Maqtal Lahoo Lahoo Hi Rahay

وہ انجمن ہو کہ مقتل لہو لہو ہی رہے

وہ انجمن ہو کہ مقتل لہو لہو ہی رہے

جہاں کہیں بھی رہے ہم تو سرخ رو ہی رہے

وہ دور ہے کہ غم وصل و ہجر ایک طرف

میں سوچتا ہوں محبت کی آبرو ہی رہے

نہ پوچھ ہم سے زمانے نے کیا سلوک کیا

بہت ہے دل میں اگر تیری آرزو ہی رہے

یہ مے کدہ ہے یہاں خون دل کی بات نہ کر

یہاں تو تذکرۂ بادہ و سبو ہی رہے

شب فراق تو آخر گزارنی ٹھہری

جو وہ نہیں نہ سہی اس کی گفتگو ہی رہے

خدا کرے نہ کبھی لذت سفر کم ہو

تمام عمر ہمیں تیری جستجو ہی رہے

بہار آئی بھی خاورؔ تو کیا بہار آئی

چمن کے پھول تو محروم‌ رنگ و بو ہی رہے

رحمان خاور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(222) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rahman Khawar, Woh Anjuman Ho Ke Maqtal Lahoo Lahoo Hi Rahay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rahman Khawar.