Hai Shouq Tu Besakhta Ankhoon Main Samu Lo

ہے شوق تو بے ساختہ آنکھوں میں سمو لو

ہے شوق تو بے ساختہ آنکھوں میں سمو لو

یوں مجھ کو نگاہوں کے ترازو میں نہ تولو

میں بھی ہوں کسی آنکھ سے ٹپکا ہوا موتی

مجھ کو بھی کسی ریشمی ڈوری میں پرو لو

لایا ہوں میں خود دل کو ہتھیلی پہ سجا کر

اس جنس کے بازار میں کیا دام ہیں بولو

میں کانچ کے ٹکڑوں کی طرح بکھرا پڑا ہوں

بھولے سے کبھی مجھ کو بھی پاؤں میں چبھو لو

پھر جانئے کب وقت کی رفتار تھمے گی

ٹھہرے ہوئے لمحے کو نگاہوں میں پرو لو

اب کوئی بکھیرے گا کڑی دھوپ میں گیسو

خود اپنے ہی دل کے کسی تہہ خانے میں سو لو

دن بھر تو رشیدؔ آپ کو ہنسنا ہی پڑے گا

رونا ہے تو اب رات کی تنہائی میں رو لو

رشید قیصرانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(324) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rasheed Qaisrani, Hai Shouq Tu Besakhta Ankhoon Main Samu Lo in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 35 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rasheed Qaisrani.