Kuch Saye Se Har Lehza Kissi Simat Rawan Hain

کچھ سائے سے ہر لحظہ کسی سمت رواں ہیں

کچھ سائے سے ہر لحظہ کسی سمت رواں ہیں

اس شہر میں ورنہ نہ مکیں ہیں نہ مکاں ہیں

ہم خود سے جدا ہوکے تجھے ڈھونڈنے نکلے

بکھرے ہیں اب ایسے کہ یہاں ہیں نہ وہاں ہیں

جاتی ہیں ترے گھر کو سبھی شہر کی راہیں

لگتا ہے کہ سب لوگ تری سمت رواں ہیں

اے موجۂ آوارہ کبھی ہم سے بھی ٹکرا

اک عمر سے ہم بھی سر ساحل نگراں ہیں

سمٹے تھے کبھی ہم تو سمائے سر مژگاں

پھیلے ہیں اب ایسے کہ کراں تا بہ کراں ہیں

تو ڈھونڈ ہمیں وقت کی دیوار کے اس پار

ہم دور بہت دور کی منزل کا نشاں ہیں

اک دن ترے آنچل کی ہوا بن کے اڑے تھے

اس دن سے زمانے کی نگاہوں پہ گراں ہیں

توڑو نہ ہمارے لیے آواز کا آہنگ

ہم لوگ تو اک ڈوبتے لمحے کی فغاں ہیں

وہ جن سے فروزاں ہوا اک عالم امکاں

وہ چاند صفت لوگ رشیدؔ آج کہاں ہیں

رشید قیصرانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(326) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rasheed Qaisrani, Kuch Saye Se Har Lehza Kissi Simat Rawan Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 35 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rasheed Qaisrani.