Nadi Ko Dekh Kar

ندی کو دیکھ کر

ندی کے حال کو

اب دیکھ کر افسوس ہوتا ہے

ندی کا ایک ماضی تھا

نہ جانے کتنی تاریخی کتابوں میں

ندی کی اہمیت کے

ان گنت ابواب روشن ہیں

ندی تہذیب کا مسکن رہی ہے

اسی کی موج نے

آغاز میں انسان کو

واقف کرایا

ارتقائی مرحلوں سے

اسی کے صاف اور شفاف پانی نے

یگوں تک

مختلف نسلوں کی

دل سے آبیاری کی

اسی کی چیختی چنگھاڑتی لہروں پہ

غلبہ پا کے انساں نے

ترقی کی

مگر اندھی ترقی نے

ندی کی شکل

اتنی مسخ کر ڈالی

کہ آنکھوں کو کسی صورت

یقیں آتا نہیں

جو کچھ نظر کے سامنے ہے

وہ حقیقت ہے

گندے بدبو دار نالے کی طرح جو

بہہ رہی ہے

یہی تو وہ ندی ہے

تذکرے جس کے کتابوں میں بھرے ہیں

کتنی تہذیبوں کا جو مسکن رہی ہے

ندی کے حال کا جب جائزہ

لیتی ہیں نظریں

تو بہت افسوس ہوتا ہے

راشد انور راشد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(813) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rashid Anwar Rashid, Nadi Ko Dekh Kar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 24 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rashid Anwar Rashid.