Teri Betuki Khamshi Se Khafa Hoon

تری بےتُکی خامشی سے خفا ہوں

تری بےتُکی خامشی سے خفا ہوں

مٙحبّت ! میں تجھ دل جلی سے خفا ہوں

گھڑی دو گھڑی بھی نہیں بیٹھتا اب

مٙیں اُس بےوفا کی گھڑی سے خفا ہوں

خدا جانتا ہے خودی کی حقیقت

تبھی تو مٙیں اِس بےخودی سے خفا ہوں

خفا ہو کے خود سے نہ بولوں گی ہرگز

وہ جس دن کہے گا پٙری سے خفا ہوں

جو لے آئی مجھ کو تری دسترس میں

بدن کی اسی تشنگی سے خفا ہوں

مجھے آج کل جانے کیا ہو گیا ہے

تمھی زندگی ہو تمھی سے خفا ہوں

یہ بادل یہ بارش یہ ٹھنڈی ہوائیں

بدن میں اترتی نمی سے خفا ہوں

نہیں مل رہا وقت اپنے لیے بھی

مٙیں ماہین اس نوکری سے خفا ہوں

مرے تن کو چھونے سے جو پھوٹتی ہے

مٙیں ماہین اُس سنسنی سے خفا ہوں

راشدہ ماہین ملک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1015) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Rashida Maheen Malik, Teri Betuki Khamshi Se Khafa Hoon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 21 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Rashida Maheen Malik.