Idrak Hi Mahal Hai Khawab Ho Khayal Ka

ادراک ہی محال ہے خواب و خیال کا

ادراک ہی محال ہے خواب و خیال کا

دل کے ورق پہ عکس ہے اس کے جمال کا

روتی نہیں ہوں میں کبھی دنیا کے سامنے

رکھتی ہوں حوصلہ میں نہایت کمال کا

ہیں مرحلے عجیب یہ عشق و خرد کے بھی

لمحوں میں کر رہی ہوں سفر ماہ و سال کا

درویش ہے کوئی تو قلندر ولی کوئی

بندوں نے پایا عشق میں رتبہ کمال کا

اتنے سکوں سے میں نے کیا عشق کا سفر

آیا نہیں گمان کسی احتمال کا

کیسا عجیب دور ہے موجودہ دور بھی

مفہوم کوئی سمجھے نہ دل کے سوال کا

دم گھٹ رہا ہو جب مرا اپنے وجود میں

کیا خاک تذکرہ ہو فراق و وصال کا

کرتی نہیں سبیلہؔ گلہ میں یہ سوچ کر

ساتھی نہیں یہاں کوئی رنج و ملال کا

سبیلہ انعام صدیقی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(385) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sabeela Inam Siddiqui, Idrak Hi Mahal Hai Khawab Ho Khayal Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 23 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sabeela Inam Siddiqui.