Jab Benai Sawan Ne Churai Ho

جب بینائی ساون نے چرائی ہو

خستگی شہر تمنا کی نہ پوچھ

جس کی بنیادوں میں

زلزلے موج تہہ آب سے ہیں

دیکھ امید کے نشے سے یہ بوجھل آنکھیں

دیکھ سکتی ہیں جو

آئندہ کا سورج زندہ

دھوپ کے پیالے میں

زیست کی ہریالی

زرد چہرے پہ یہ کیسا ہے پریشان لکیروں کا ہجوم

اور کیوں خوف کی بد شکل پچھل پائی کوئی

تجھے باہوں میں جکڑنے کو ہے

زلزلے، نیند سے بیدار ہوا چاہتے ہیں کیا، تو کیا

چھوڑ بھی شہر تمنا کا خیال

(دیکھ امید کے نشے سے یہ بوجھل آنکھیں)

شہر مسمار کہاں ہوتا ہے

شہر آثار قدیمہ میں بدل جائے گا

سعید احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(569) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Saeed Ahmad, Jab Benai Sawan Ne Churai Ho in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 22 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Saeed Ahmad.