Aik Gham Darwaish Ka Jo Sahib Alam Tha

ایک غم درویش کا جو صاحبِ آلام تھا

ایک غم درویش کا جو صاحبِ آلام تھا

نام ور نہ ہو سکا کہ ہجر کا ہنگام تھا

جن کی جنبش کر گئی دو نیم میرا تن بدن

ان لبوں کی پھونک سے ہی زخم کو آرام تھا

شمس تیرے شہر میں کل بک گئیں تاریکیاں

وحشتوں کی جنس تھی اور بزدلی کا دام تھا

شہرتوں نے کردیا یوں کھوکھلا کہ آخرش

زندگی تھی نام میرے ، میں برائے نام تھا

گھر میں گھس کے مارنا معمول ہے ہر روز کا

رہگزر پر جو ہوا وہ حادثہ بھی عام تھا

وہ بھی وقتِ اوج تھا اس گر چکی دیوار پر

آتشیں تھی روپ میں سایہ نظیر ِ شام تھا

ہم کو ساگؔر ہر سراں پر الفتیں روتی ملیں

اس ڈگر پر ہر کوئی میری طرح ناکام تھا

ساگؔرحضورپوری

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(770) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sagar Hazor Puri, Aik Gham Darwaish Ka Jo Sahib Alam Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sagar Hazor Puri.