Daemi HijratoN Kay BaeTay HaiN

دائمی ہجرتوں کے بیٹے ہیں

دائمی ہجرتوں کے بیٹے ہیں

راستے جو گھروں سے نکلے ہیں

یہ زمیں مر رہی ہے اندر سے

تتلیاں پھول پیڑ روتے ہیں

بیٹھ کر سوچتے ہیں ذلت میں

ہم وہی آسمان والے ہیں؟

موج در موج خون اچھلے گا

ان ہی دریاؤں سے جو اجلے ہیں

بٹ رہے ہیں طعام ہر جانب

پھر بھی ہم لوگ کتنے بھوکے ہیں

تم کو معلوم ہی نہیں ہم پر

روز و شب جو عذاب اترے ہیں

ہر زمانے میں میرے جیسے فگار

صرف دو چار لوگ ہوتے ہیں

سلیم فگار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(270) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Saleem Figar, Daemi HijratoN Kay BaeTay HaiN in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 35 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Saleem Figar.