Kabhi Lecture Theater Main

کبھی لیکچر تھیٹر میں

کبھی لیکچر تھیٹر میں

گرامر کا کوئی نکتہ سمجھتے اور سمجھاتے

براؤننگ، کیٹس اور شیلی کی نظموں کا ترنم

اپنے شاگردوں کو بتلاتے

رسل اور ہکسلے کے فلسفوں کے بیچ سے ہو کر گزرتے

نوجواں ذہنوں کو لٹریچر پڑھاتے

یوں تمہاری یاد کا کوندا

مرے دل میں لپکتا ہے

مجھے ساری گرامر بھول جاتی ہے

رومینٹک شاعروں کی ساری نظمیں

ایک لے پر رقص کرتی ہیں

رسل اور ہکسلے کے فلسفے

اپنے معانی چھوڑ دیتے ہیں

تمہاری ذات سے سارے تعلق جوڑ دیتے ہیں

سلمان باسط

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(418) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Salman Basit, Kabhi Lecture Theater Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Hope Urdu Poetry. Also there are 27 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Salman Basit.