Fizaye Chaman Main Pheel Gayi Hai Khushbu E Gul

فضائے چمن میں پھیل گئی ہے خوشبوئے گل

فضائے چمن میں پھیل گئی ہے خوشبوئے گل

مگر پھر بھی پریشاں ہے گیسوئے گل

تر رکھے شبنم کلیوں کو یہ ہے آرزوئے گل

دیکھ یہ چبھتا ہوا کانٹا بھی ہے عضوئے گل

کانٹوں پہ مسکرانا بھی ہے شامل خوئے گل

زندگیٴ گل دیکھ کر ہم بھی کرتے مانند جستجوئے گل

اپنی تقدیر پہ تُو ذرا سا بھی یقیں نہ کر

اپنے حُسن پہ تو اور پیدا حُسن بریں نہ کر

مری نظر میں تو اک بے وفا کے سوا کچھ نہیں

ترے قانون میں دستور جفا کے سوا کچھ نہیں

مرے سینے میں اس قلب خفا کے سوا کچھ نہیں

مرا تجھ پہ مر مٹنا مری خطا کے سوا کچھ نہیں

شب کی یہ اداسی امید فردا کے سوا کچھ نہیں

مرا خون جگر بھی تری نگہ میں رنگ حنا کے سوا کچھ نہیں

برسوں سے یہ جام چھلکتا رہا مرے سینے میں

کیوں تجھے خمار نہ آیا مرا خون جگر بھی پینے میں

ترے دل کی داستاں ترے چہرے پہ تحریر ہے

مرا طائر عشق صر ف مرے دل میں اسیر ہے

مری زباں کی نہیں یہ مرے دل کی تقریر ہے

میری خامشی ترے بولنے سے بے نظیر ہے

مری آنکھوں میں دولت اشک بھی خطیر ہے

تو کیا جانے اس راز کو محو خواب ترا ضمیر ہے

کس نظر سے دیکھے وہ چہرے کی ویرانی کیسے سنے دل کی صدا

اب تو آئینہ بھی لگتا ہے ان سے کچھ خفا خفا!

کیا وجہ ہے ترے ہاتھ سے آج صراحی نہ چھُوٹی

نہ غم بچھڑا مجھ سے ا و ر میکشی کی برائی نہ چھُوٹی

تری زباں سے مرے لیے وہ ہرزہ سرائی نہ چھُوٹی

مسافر عشق کیوں ترے قدموں سے خاک صحرائی نہ چھُوٹی

میری زباں سے اب تک تری دل آرائی نہ چھُوٹی

جس سے بنتا تھا مرا کوہٴ غم ، آج وہ رائی نہ چھُوٹی

نہ آئے گا تجھے نظر یہ حُسن ماہتاب کی ماہتابی میں

جو دیکھا ہے تو نے اس حسین کے لب شرابی میں

تری طبیعت پہ کسی موسم کا کوئی اثر نہیں

مرا دل آوا ز غم سے لرز جانے والا قصر نہیں

مرے دل پہ ترا اتنا بڑا ستم قدرت کا امر نہیں

کیا ترے پاس مری وفا کا ظلم کے سوا کوئی ثمر نہیں

مرا دل تو پگھل گیا مگر مری آنکھ تر نہیں

آہ تُو کہیں یہ سمجھ نہ بیٹھے کہ مجھ میں مادہٴ صبرنہیں

ترے ہاتھ میں تیر ہو ، خنجر ہو یا ہو شمشیر

میں یہی سمجھ لوں گا یہ پھول ہے کوئی خنجر نہیں!

سردار زبیر احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(750) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Sardar Zubair Ahmed, Fizaye Chaman Main Pheel Gayi Hai Khushbu E Gul in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Funny, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 33 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Funny, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Sardar Zubair Ahmed.