Social Poetry of Shahnaz Muzammil - Social Shayari

شہناز مزمل کی معاشرتی شاعری

تھے عجیب فیصلے میرے بھی کڑی کماں سے گزر گئی

The Ajeeb Mere Bhi Faisle Main Kari Kamaan Se Guzar Gai

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

پاس آ کر کیوں چلے جانا اسے اچھا لگا

Pas Aakar Kyun Chale Jana Usy Acha Laga

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

کوئی تو آکے شب ہجر میں پوچھے مجھ سے

Koi To Aake Shab E Hijar Mein Poche Mujh Se

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

مجھے بڑھنے کا آگے حوصلہ دہ

Mujhe Badhane Ka Age Hosla Do

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

وہ منظر نقش ہے اب بھی

Wo Manzar Naqash Hai Ab Bhi

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

کسی کی چنری میں دھوپ باندھی کسی کو وجہ جما ل رکھا

Kisi Ki Chezi Mein Dhoop Bandhi Kisi Ko Waja E Jamal Rakha

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

ہوں اپنی فکر وانا کی قیدی

Hoon Apni Fikar Wana Ki Qaidi

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

جنوں کے دور میں خود سے بھی رابطہ کب تھا

Jino Ke Daur Mein Khud Se Bhi Raabta Tha

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

سفر ہے امکاں کو سوچتی ہوں

Safar Hai Amkaan Ko Sochti Hoon

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

وہاں پر کون ہوگا

Wahan Par Kaun Hoga

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

سنو اک بات میری برق لمحو

Suno Ek Baat Meri Baraq Lamho

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

مری چیزی کے پلو میں مرے دست حنائی میں

Meri Chezo Ke Pehlo Mein Mere Dast E Hani Main

(Shahnaz Muzammil) شہناز مزمل

Social Shayari of Shahnaz Muzammil - Poetry of Social. Read the best collection of Social poetry by Shahnaz Muzammil, Read the famous Social poetry, and Social Shayari by the poet. Social Nazam and Social Ghazals of the poet. The best collection of Shayari by Shahnaz Muzammil online. You can also read different types of poetries by the poet including Social Shayari from different books of the poet.