Hamare Zehen Main Yeh Baat Bhi Nahi Aayi

ہمارے ذہن میں یہ بات بھی نہیں آئی

ہمارے ذہن میں یہ بات بھی نہیں آئی

کہ تیری یاد ہمیں رات بھی نہیں آئی

بچھڑتے وقت جو گرجے وہ کیسے بادل تھے

یہ کیسا ہجر کہ برسات بھی نہیں آئی

تجھے نہ پا سکے ہم اس کا اک سبب یہ ہے

پلٹ کے گردش حالات بھی نہیں آئی

ہوا یوں ہاتھ سے بازی نکل گئی اک روز

ہمارے حصے میں پھر مات بھی نہیں آئی

الجھ کے رہ گئے کیا ہم بھی کار دنیا میں

کہ نوبت سفر ذات بھی نہیں آئی

شہرام سرمدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(977) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahram Sarmadi, Hamare Zehen Main Yeh Baat Bhi Nahi Aayi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 48 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahram Sarmadi.