Aandhi Ki Zad Mein Shama Tamanna Jalayi Jaye

آندھی کی زد میں شمع تمنا جلائی جائے

آندھی کی زد میں شمع تمنا جلائی جائے

جس طرح بھی ہو لاج جنوں کی بچائی جائے

بے آب و بے گیاہ ہے یہ دل کا دشت بھی

اک نہر آنسوؤں کی یہاں بھی بہائی جائے

عاجز ہیں اپنے طالع بیدار سے بہت

ہر رات ہم کو کوئی کہانی سنائی جائے

سب کچھ بدل گیا ہے مگر لوگ ہیں بضد

مہتاب ہی میں صورت جاناں دکھائی جائے

کچھ ساغروں میں زہر ہے کچھ میں شراب ہے

یہ مسئلہ ہے تشنگی کس سے بجھائی جائے

شہروں کی سرحدوں پہ ہے صحراؤں کا ہجوم

کیا ماجرا ہے آؤ خبر تو لگائی جائے

نازل ہو جسم و روح پہ جب بے حسی کا قہر

اس وقت دوستو یہ غزل گنگنائی جائے

شہریار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(795) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahryar, Aandhi Ki Zad Mein Shama Tamanna Jalayi Jaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 150 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahryar.