Aik Aur Saal Girah

ایک اور سال گرہ

لو تیسواں سال بھی بیت گیا

لو بال روپہلی ہونے لگے

لو کاسۂ چشم ہوا خالی

لو دل میں نہیں اب درد کوئی

یہ تیس برس کیسے کاٹے

یہ تیس برس کیسے گزرے

آسان سوال ہے کتنا یہ!

معلوم ہے مجھ کو یہ دنیا

کس طرح وجود میں آئی ہے

کس طرح فنا ہوگی اک دن

معلوم ہے مجھ کو انساں نے

کس طرح سے کی تخلیق خدا

کس طرح بتوں کو پیدا کیا

معلوم ہے مجھ کو میں کیا ہوں

کس واسطے اب تک زندہ ہوں

اک اس کے جواب کا علم نہیں

یہ تیس برس کیسے کاٹے

ہاں یاد ہے اتنا میں اک دن

ٹافی کے لیے رویا تھا بہت

اماں نے مجھے پیٹا تھا بہت

ہاں یاد ہے اتنا میں اک دن

تتلی کا تعاقب کرتے ہوئے

اک پیڑ سے جا ٹکرایا تھا

ہاں اتنا یاد ہے میں اک دن

نیندوں کے دیار میں سپنوں کی

پریوں سے لپٹ کر سویا تھا

ہاں اتنا یاد ہے میں اک دن

گھر والوں سے اپنے لڑ بھڑ کے

توڑ آیا تھا سب رشتے ناطے

ہاں اتنا یاد ہے میں اک دن

جب بہت دکھی تھا تنہا تھا

اک جسم کی آگ میں پگھلا تھا

شہریار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(742) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahryar, Aik Aur Saal Girah in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 150 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahryar.