Jahan Pay Teri Kami Bhi Nah Ho Sakay Mehsoos ( Radeef. . Y )

جہاں پہ تیری کمی بھی نہ ہو سکے محسوس (ردیف .. ی)

جہاں پہ تیری کمی بھی نہ ہو سکے محسوس

تلاش ہی رہی آنکھوں کو ایسے منظر کی

ہمیں تو خود نہیں معلوم کیا کسی سے کہیں

کہ تجھ سے ملنے کی کوشش نہ کیوں بچھڑ کر کی

مگر یہ ذوق پرستش کہ اب بھی تشنہ ہے

جبیں کو چوم چکے ایک ایک پتھر کی

کہاں پہ دفن وہ پرچھائیاں کریں یارو

جو تاب لا نہ سکیں روشنی کے خنجر کی

ہر ایک گل کو ہے عشق سموم کا سودا

ہر ایک شاخ یہاں معتقد ہے صرصر کی

جدھر اندھیرا ہے تنہائی ہے اداسی ہے

سفر کی ہم نے وہی سمت کیوں مقرر کی

شہریار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(607) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahryar, Jahan Pay Teri Kami Bhi Nah Ho Sakay Mehsoos ( Radeef. . Y ) in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 150 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahryar.