Yeh Ik Shajar Ke Jis Pay Nah Kanta Nah Phool Hai

یہ اک شجر کہ جس پہ نہ کانٹا نہ پھول ہے

یہ اک شجر کہ جس پہ نہ کانٹا نہ پھول ہے

سائے میں اس کے بیٹھ کے رونا فضول ہے

راتوں سے روشنی کی طلب ہائے سادگی

خوابوں میں اس کی دید کی خو کیسی بھول ہے

ہے ان کے دم قدم ہی سے کچھ آبروئے زیست

دامن میں جن کے دشت تمنا کی دھول ہے

سورج کا قہر صرف برہنہ سروں پہ ہے

پوچھو ہوس پرست سے وہ کیوں ملول ہے

آؤ ہوا کے ہاتھ کی تلوار چوم لیں

اب بزدلوں کی فوج سے لڑنا فضول ہے

شہریار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(581) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahryar, Yeh Ik Shajar Ke Jis Pay Nah Kanta Nah Phool Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 150 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahryar.