Waisay To Ik Dosray Ki Sab Suntay Hain

ویسے تو اک دوسرے کی سب سنتے ہیں

ویسے تو اک دوسرے کی سب سنتے ہیں

جن کو سنانا چاہتا ہوں کب سنتے ہیں

اب بھی وہی دن رات ہیں لیکن فرق یہ ہے

پہلے بولا کرتے تھے اب سنتے ہیں

شک اپنی ہی ذات پہ ہونے لگتا ہے

اپنی باتیں دوسروں سے جب سنتے ہیں

محفل میں جن کو سننے کی تاب نہ تھی

وہ باتیں تنہائی میں اب سنتے ہیں

جینا ہم کو ویسے بھی کب آتا تھا

بدل گئے ہیں جینے کے ڈھب سنتے ہیں

آنکھیں چھو کر دیکھتی ہیں آوازوں کو

کان دہائی دیتے ہیں لب سنتے ہیں

سنتے ضرور ہیں دنیا والے بھی شہزادؔ

کہنے کی خواہش نہ رہے تب سنتے ہیں

شہزاد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(242) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shahzad Ahmed, Waisay To Ik Dosray Ki Sab Suntay Hain in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 101 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shahzad Ahmed.