Jaise Bagola Uthey Teh E Aab Se Koi

جیسے بگولہ اٹھے تہہِ آب سے کوئی

جیسے بگولہ اٹھے تہہِ آب سے کوئی

بیدار ہو گیا یوں، مرے خواب سے کوئی

اشکوں نے کیسے دھار لیا، روپ خون کا

پوچھے یہ جا کے دیدہ ء خونباب سے

لے کر کھڑی ہوں کاسہ ء آواز ریت پر

شاید پکارے حلقہ ء گرداب سے کوئی

ہونٹوں پہ ہے جو پیاس کی پپڑی اکھیڑ دے

تکتا ہے تجھ کو عالمِ بیتاب سے کوئی

حسرت سے آسمان کو تکتے ہیں بار بار

جیسے نکل ہی آئے گا مہتاب سے کوئی

ہم سے فقیر لوگوں کی دنیا ہی اور ہے

اندازہ کیا لگائے گا اسباب سے کوئی

لو جا رہا ہے اپنے ہی مسکن کو چھوڑ کر

آرزدہ ہو کر خاطرِ احباب سے کوئی

شائستہ سحر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1226) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shaista Sehar, Jaise Bagola Uthey Teh E Aab Se Koi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 55 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shaista Sehar.