John Elia Ki Nazar

جون ایلیا کی نذر

تم بھی بے کل ہو خاکدان میں کیا؟

مجھ کو بتلاؤ، ہے گمان میں کیا ؟

راہ بھولے ہو آسمان میں کیا؟

بولو، آؤ گے میرے دھیان میں کیا ؟

تم نے سورج جلا کے دیکھ لیا

روشنی ہو گئی مکان میں کیا؟

اشک گرتے ہیں ابر بن بن کر

کوئی روتا ہے، آسمان میں کیا؟

دے گئے زخم، سوکھے ہونٹوں کو

خار ہوتے ہیں پھول دان میں کیا؟

مالِ دنیا تو ہے فراواں مگر

جنسِ الفت بھی ہے دوکان میں کیا؟

روشنی کا سفیر جگنو ہے

کوئی روزن نہیں مکان میں کیا؟

فکرِ فردا کی ہے چہل قدمی

اور کچھ بھی ہے تیرے گیان میں کیا؟

دل یہ معجز بیانی تجھ سے ہے

ورنہ میں کیا. مرے بیان میں کیا!

غم بھی دے کر سحر وہ شاد نہیں

جاں بھی دے دوں ،اسے لگان میں کیا؟

شائستہ سحر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1125) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shaista Sehar, John Elia Ki Nazar in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 55 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shaista Sehar.