Ju Raat Hum Ne Guzari Guzarni Thi Hi Nahi

جو رات ہم نے گذاری، گذرنی تھی ہی نہیں

جو رات ہم نے گذاری، گذرنی تھی ہی نہیں

ضروری بات تھی کہنی مگر ، کہـی ہی نہیں

دکھـــــــائی دیتی نہیں میں، قریب ہو کر بھی

تمھاری آنکھوں میں تھوڑی سی روشنی بھی نہیں؟

کسی کا ہونا نہ ہونا ہے کیسا بے معنی

بچھڑ کے خود سے بھی لگتا ہے،کچھ کمی ہی نہیں

جو تجھ کو دیکھوں تو ہر شے، دکھائی دیتی ہے

ترے بغیر نظر کچھ بھی دیکھتی ہی نہیں

تمام نام پتے،بھول جانے والے ! سُن

جو یاد رکّھی تھی تو نے' یہ وہ گلی ہی نہیں

متاعِ دیدہ و دل لے کے کیوں چلے آئے

ہمیں تو تم سے، کوئی شے خریدنی ہی نہیں

تمھارے جلتے ہوئے زخم ،جو کرے برفاب

ہماری آنکھوں میں اے دوست! وہ نمی ہی نہیں

برت چکے ہیں تری کائنات کیا سب لوگ؟

مرے سوا تو یہاں کوئی حیرتی ہی نہیں

شائستہ سحر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1167) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shaista Sehar, Ju Raat Hum Ne Guzari Guzarni Thi Hi Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 55 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shaista Sehar.