Mouj Gham Is Liye Shayad Nahi Guzri Sir Say

موج غم اس لیے شاید نہیں گزری سر سے

موج غم اس لیے شاید نہیں گزری سر سے

میں جو ڈوبا تو نہ ابھروں گا کبھی ساگر سے

اور دنیا سے بھلائی کا صلہ کیا ملتا

آئنہ میں نے دکھایا تھا کہ پتھر برسے

کتنی گم سم مرے آنگن سے صبا گزری ہے

اک شرر بھی نہ اڑا روح کی خاکستر سے

پیار کی جوت سے گھر گھر ہے چراغاں ورنہ

ایک بھی شمع نہ روشن ہو ہوا کے ڈر سے

اڑتے بادل کے تعاقب میں پھرو گے کب تک

درد کی دھوپ میں نکلا نہیں کرتے گھر سے

کتنی رعنائیاں آباد ہیں میرے دل میں

اک خرابہ نظر آتا ہے مگر باہر سے

وادیٔ خواب میں اس گل کا گزر کیوں نہ ہوا

رات بھر آتی رہی جس کی مہک بستر سے

طعن اغیار سنیں آپ خموشی سے شکیبؔ

خود پلٹ جاتی ہے ٹکرا کے صدا پتھر سے

شکیب جلالی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(216) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shakeeb Jalali, Mouj Gham Is Liye Shayad Nahi Guzri Sir Say in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 35 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shakeeb Jalali.