Yeh Kya Hai Mohabat Mein To Aisa Nahi Hota

یہ کیا ہے محبت میں تو ایسا نہیں ہوتا

یہ کیا ہے محبت میں تو ایسا نہیں ہوتا

میں تجھ سے جدا ہو کے بھی تنہا نہیں ہوتا

اس موڑ سے آگے بھی کوئی موڑ ہے ورنہ

یوں میرے لیے تو کبھی ٹھہرا نہیں ہوتا

کیوں میرا مقدر ہے اجالوں کی سیاہی

کیوں رات کے ڈھلنے پہ سویرا نہیں ہوتا

یا اتنی نہ تبدیل ہوئی ہوتی یہ دنیا

یا میں نے اسے خواب میں دیکھا نہیں ہوتا

سنتے ہیں سبھی غور سے آواز جرس کو

منزل کی طرف کوئی روانہ نہیں ہوتا

دل ترک تعلق پہ بھی آمادہ نہیں ہے

اور حق بھی ادا اس سے وفا کا نہیں ہوتا

شہر یار

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(819) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Shehr Yar, Yeh Kya Hai Mohabat Mein To Aisa Nahi Hota in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 13 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shehr Yar.