Suleman Jazib Poetry, Suleman Jazib Shayari

سلیمان جاذب - Suleman Jazib

مشہور شاعر سلیمان جاذب کی شاعری ۔ نظمیں اور غزلیں

پردیس میں عید

سلیمان جاذب

سانپ ہمیشہ سانپ رہے گا

سلیمان جاذب

محبت

سلیمان جاذب

وہ لڑکی

سلیمان جاذب

سِلے ہونٹوں کا دُکھ

سلیمان جاذب

مائے سوہنے

سلیمان جاذب

کاش

سلیمان جاذب

دیوی اور دیوتا

سلیمان جاذب

پیاری امی جان کے نام الوداعی بوسہ

سلیمان جاذب

خدا کا شکر ہے کوئی بچھڑ کر لوٹ آیا ہے

سلیمان جاذب

اپنے ہونے سے تو مُکر گیا ہے

سلیمان جاذب

عکس مسمار کرتا جاتا ہوں

سلیمان جاذب

حقیقت بھی لگنے لگی ہے کہانی

سلیمان جاذب

مٹا کر پھر بنایا جا رہا ہے

سلیمان جاذب

گھرا نہیںاُس جمال میں بھی

سلیمان جاذب

نظروں سے کسی کوبھی گراتے نہیں جاناں

سلیمان جاذب

ہمارے ساتھ ماضی کے کئی قصے نکل آئے

سلیمان جاذب

ترے رستے میں بیٹھے ہیں ، تو اس میں کیا برائی ہے

سلیمان جاذب

جب بھی اُس کی مثال دیتی ہو

سلیمان جاذب

وقت نے یوں مجبور کیا

سلیمان جاذب

تو نہیں جب سے ہم سفر میرا

سلیمان جاذب

ہونٹوں پہ جو تیرے ہے یہ مسکان مری جان

سلیمان جاذب

الوداع اس طرح کہا میں نے

سلیمان جاذب