Jab Talak Roshni Fikar O Nazar Baqi Hai

جب تلک روشنیٔ فکر و نظر باقی ہے

جب تلک روشنیٔ فکر و نظر باقی ہے

تیرگی لاکھ ہو امکان سحر باقی ہے

کس کے جلووں کا یہ آنکھوں میں اثر باقی ہے

حسن باقی ہے نہ اب حسن نظر باقی ہے

یہ بھی اک معجزۂ جوش جنوں ہے کہ نہیں

پا شکستہ ہوں مگر عزم سفر باقی ہے

یہ بھی کیا نظم جہاں ہے کہ ازل سے اب تک

بس وہی سلسلۂ شام و سحر باقی ہے

آج یوں آبلہ پایان جنوں گزرے ہیں

اک چراغاں سا سر‌ راہ گزر باقی ہے

میں خزاں دیدہ و آوارہ سہی پھر بھی سرورؔ

میرے نغموں میں بہاروں کا اثر باقی ہے

سرور بارہ بانکوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(560) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Suroor Barabankvi, Jab Talak Roshni Fikar O Nazar Baqi Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 20 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Suroor Barabankvi.