Apni Ankhoon Ka Asaar Barq E Nazar Dekh Liya

اپنی آنکھوں کا اثر، برق نظر، دیکھ لیا

اپنی آنکھوں کا اثر، برق نظر، دیکھ لیا

بجلیاں گرنے لگیں تو نے جدھر، دیکھ لیا

کر لئے خوب ستم، تھک ہی گئے نا آخر

میرا دل دیکھ لیا میرا جگر دیکھ لیا

منع کرتے تھے کہ بیمارِ محبت کو نہ چھیڑ

کیسا وہ تڑپا کیا آٹھ پہر، دیکھ لیا

ضبط تم کر نہ سکے، آہیگئے آخرِ کار

تم نے دیکھا، مری آہوں کا اثر دیکھ لیا

مینھ آنکھوں سے برستا رہا، دل پُھنکتا رہا

"ہم نے برسات میں جلتے ہوئے گھر دیکھ لیا"

ہم نہ کہتے تھے کہ دیوانہ ہے جاں دے دیگا

دیکھا پروانے کا ننّھا سا جگر دیکھ لیا

وائے مجبورءِ دل، اپنااُجڑنا عالم

ہم سے دیکھا نہیں جاتا تھا، مگر دیکھ لیا

سید عالم واسطی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(437) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Syed Alam Wasti, Apni Ankhoon Ka Asaar Barq E Nazar Dekh Liya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Syed Alam Wasti.