Yeh Main Ne Tum Se Kab Kaha Gul Bahar Chahiye

یہ میں نے تم سے کب کہا گُلِ بہار چاہئے

یہ میں نے تم سے کب کہا گُلِ بہار چاہئے

جو یکسوئی کی جان ہو مجھے وہ خار چاہئے

نہ لالہ زر چاہئے نہ ہی بہار چاہئے

جو بھر دے دامنِ طلب وہ خار زار چاہئے

جو دے کے مجھ کو رنج و غم تجھے قرار آگیا

ترے قرار کی قسم، ترا قرار چاہئے

جہاں میں آج دوستوں کسے ہے فرصتِ شنید

بیانِ غم کے واسطے کچھ اختصار چاہئے

جو دل کا بھید جن لے جو دل کی بات مان لے

جو غم کا راز دار ہو وہغمگسارچاہئے

مشیّیتوں کی گود میں ہر آدمی ہے ایک لاش

اس اختیارِ محض کو بھی اختیار چاہئے

کمال ِبندگی میں گروقارِ سجدہ بھی رہے

تو عالم ایک بار کیا ھزار بار چاہئے

سید عالم واسطی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(754) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Syed Alam Wasti, Yeh Main Ne Tum Se Kab Kaha Gul Bahar Chahiye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Syed Alam Wasti.