Tre Marsgaan Ki Faujein Bandh Kar Saf Jab Huien Khirkia

ترے مژگاں کی فوجیں باندھ کر صف جب ہوئیں کھڑیاں

ترے مژگاں کی فوجیں باندھ کر صف جب ہوئیں کھڑیاں

کیا عالم کو سارے قتل لو تھیں ہر طرف پڑیاں

دم اپنے کا شمار اس طرح تیرے غم میں کرتا ہوں

کہ جیسے شیشۂ ساعت میں گنتا ہے کوئی گھڑیاں

ہمیں کو خانۂ زنجیر سے الفت ہے زنداں میں

وگرنہ ایک جھٹکے میں جدا ہو جائیں سب کڑیاں

تجھے دیکھا ہے جب سے بلبل و گل نے گلستاں میں

پڑی ہیں رشتۂ الفت میں ان کے تب سے گل چھڑیاں

فغاں آتا نہیں وہ شوخ میرے ہاتھ اے تاباںؔ

لکیریں انگلیوں کی مٹ گئیں گنتے ہوے گھڑیاں

تاباں عبد الحی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(329) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of TABAN ABDUL HAI, Tre Marsgaan Ki Faujein Bandh Kar Saf Jab Huien Khirkia in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 27 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of TABAN ABDUL HAI.