Manzlon Se Begana Aaj Bhi Safar Mera

منزلوں سے بیگانہ آج بھی سفر میرا

منزلوں سے بیگانہ آج بھی سفر میرا

رات بے سحر میری درد بے اثر میرا

گمرہی کا عالم ہے کس کو ہم سفر کہیے

تھک کے چھوڑ بیٹھی ہے ساتھ رہ گزر میرا

وہ فروغ خلوت بھی انجمن سراپا بھی

بھر گیا ہے پھولوں سے دامن نظر میرا

اب ترے تغافل سے اور کیا طلب کیجے

شوق نا رسا میرا عشق معتبر میرا

دور کم عیاری ہے کچھ پتہ نہیں چلتا

کون میرا قاتل ہے کون چارہ گر میرا

ناگزیر ہستی ہیں فصل گل کے ہنگامے

شوزش نمو تیری فتنۂ شرر میرا

کچھ بتاؤ تو آخر کیا جواب دوں اس کو

اک سوال کرتا ہے روز مجھ سے گھر میرا

آسماں کا شکوہ کیا وقت کی شکایت کیوں

خون دل سے نکھرا ہے اور بھی ہنر میرا

دل کی بے قراری نے ہوش کھو دیے تاباںؔ

ورنہ آستانوں پر کب جھکا تھا سر میرا

غلام ربانی تاباںؔ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(329) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of TABAN GHULAM RABBANI, Manzlon Se Begana Aaj Bhi Safar Mera in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 33 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of TABAN GHULAM RABBANI.