Bohat Jabeen O Rukh O Lab Bohat Qad O Gaisu

بہت جبین و رخ و لب بہت قد و گیسو

بہت جبین و رخ و لب بہت قد و گیسو

طلب ہے شرط سکوں کے ہزار ہا پہلو

جو بے خودی ہے سلامت تو مل ہی جائے گا

برائے فرصت اندیشہ یار کا زانو

ہزار دشت بلا حلقۂ اثر میں ہیں

مرا جنوں ہے کہ چشم غزال کا جادو

یہ راز کھول دیا تیری کم نگاہی نے

سکوں کی ایک نظر درد کے بہت پہلو

صبا ہزار کرے بوئے گل کی آمیزش

نہ دب سکے گی ترے جسم ناز کی خوشبو

اک اضطراب‌ حسیں ہے فشار تنگیٔ مے

کنار‌ شوق میں تو ہے کہ دام میں آہو

بہت ہے اہل بصیرت کو ایک جلوہ بھی

وفور‌ تشنہ لبی ہو اگر تو خم ہے سبو

جنوں اور اہل جنوں کا وہ قحط ہے تابشؔ

اٹھا نہ دشت سے پھر کوئی نعرۂ یاہو

تابش دہلوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(426) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Tabish Dehlvi, Bohat Jabeen O Rukh O Lab Bohat Qad O Gaisu in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 30 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Tabish Dehlvi.