Poetry From Book "Manzar Manzar Dhoop " By Tabish Kamal

تابش کمال کی کتاب 'منظر منظر دھوپ ' سے تمام شاعری

منظر منظر دھوپ

Manzar Manzar Dhoop

زندگی کی دھوپ میں درکار تھا سایا ہمیں

Zindagi Ki Dhoop Mein Darkar Tha Saya Hume

(Tabish Kamal) تابش کمال

وفا وہ شخص مرے ساتھ بھی نہ کر پایا

Wafa Wo Shakhas Mere Sath Bhi Na Kar Paya

(Tabish Kamal) تابش کمال

اُفق سے پار کوئی حد ، نظر میں رکھے گی

Ufaq Se Par Koi Had Nazar Mein Rakhe Gi

(Tabish Kamal) تابش کمال

تمہیں کیوں ہو رہا ہے اب ملال آہستہ آہستہ

Tumhe Kiyun Ho Raha Hai Ab Malal Ahista Ahista

(Tabish Kamal) تابش کمال

تاویل

Zamane Bhar Ke Masail Pe Bat Karte Hain

(Tabish Kamal) تابش کمال

تاکید

Usy Kehna

(Tabish Kamal) تابش کمال

رات اگر کچھ گہر پرو جائے

Rat Agar Kuch Gehar Paro Jaye

(Tabish Kamal) تابش کمال

قریبِ ساحل مُجھ ایسے زندہ کو دفن کرنے کے منتظر ہیں

Qareeb E Sahil Mujh Aise Zindah Ko Dafan Karne Ke Muntazir

(Tabish Kamal) تابش کمال

پیلی سرسوں ، اُجلے بچپن کی باتیں ہی بھُول گیا

Peli Sarson Ujle Bachpan Ki Baten Hi Bhol Gya

(Tabish Kamal) تابش کمال

مُجھ خطا کار پہ یہ چشمِ عنایت آقا

Mujh Khata Kar Pe Ye Chasham E Anayat Aqa

(Tabish Kamal) تابش کمال

مِری ذات بھی ، مِری بات بھی ، مِری شاعری ترے نام سے

Meri Zat Bhi Meri Bat Bhi Meri Shairi Tere Naam Se

(Tabish Kamal) تابش کمال

کبھی سُنی ہی نہیں شہر میں کوئی آواز

Kuch Suni Hi Nahi Shehar Mein Koi Awaaz

(Tabish Kamal) تابش کمال

کبھی اِس نگر تجھے دیکھنا ، کبھی اُس نگر تجھے ڈھونڈنا

Kabhi Is Nagar Tujhe Dekhna Kabhi Us Nagar Tujhe Dhoondna

(Tabish Kamal) تابش کمال

اِک سِرا تو ہے سلامت ، دوسرا ٹُوٹا ہُوا

Ek Sira To Hai Salamat Dosra Tota Hova

(Tabish Kamal) تابش کمال

دِل و دماغ پہ جو بار تھا ، نہیں اُترا

Dil O Dimag Pe Ho Bar Tha Nahi Utra

(Tabish Kamal) تابش کمال

دیکھا تھا جیسا خواب میں ویسا نہیں ہُوا

Dekha Tha Jaisa Khawab Mein Waisa Nahi Hova

(Tabish Kamal) تابش کمال

عجیب خوف سا حائل دکھائی دیتا ہے

Ajeeb Khauf Sa Haayal Dikhai Deta Hai

(Tabish Kamal) تابش کمال

وقت کے دشت تاریک میں

Waqat Ke Dasht E Tareek Mein

(Tabish Kamal) تابش کمال