Poetry From Book "Sal E Alla" By Tabish Kamal

تابش کمال کی کتاب 'صَلِّ علیٰ' سے تمام شاعری

صَلِّ علیٰ

Sal E Alla

اُن کی خدمت میں اسی نور کے زینے کی طرف

Unki Khidmat Mein Isi Noor Ke Zeene Ki Taraf

(Tabish Kamal) تابش کمال

سورج میں نور چاند کا حالا انہی سے ہے

Suraj Mein Noor Chand Ka Haala Unhi Se Hai

(Tabish Kamal) تابش کمال

روز و شب وہ در و دیوار بلاتے ہیں مجھے

Rooz O Shab Wo Dar O Deewar Bulate Hain Mujhe

(Tabish Kamal) تابش کمال

نئے سخن کی زمینوں میں پھول کھلتے ہیں

Naye Sukhan Ki Zameen Mein Phool Khilte Hain

(Tabish Kamal) تابش کمال

مرے دل لا دوا کو کیوں ہو کوئی بھی رنج و ملال آقا

Mere Dil E La Dawa Ko Kiyon Ho Koi Bhi Ranj O Malal Aaqa

(Tabish Kamal) تابش کمال

مرے چار سو وہی نور ہے اسی روشنی کا وفور ہے

Mere Char Su Wohi Noor Hai Usi Roshi Ka Wafoor Hai

(Tabish Kamal) تابش کمال

کتنی پر نور ہے سیرت اُن کی

Kitni Pur Noor Hai Seerat Unki

(Tabish Kamal) تابش کمال

حسن نور مبیں خاتم الانبیا

Hussan E Noor E Mubeen Khatim Ul Anbiya

(Tabish Kamal) تابش کمال

حسن مکمل نور مجسم آپ ہیں بس

Husn E Mukamal Noor E Mujasm Aap Hain Bas

(Tabish Kamal) تابش کمال

فضائے باغ جناں تک گئی ہے میری دعا

Fizaye Bag E Jinaan Tak Gai Hai Meri Dua

(Tabish Kamal) تابش کمال

درد و الم حد سے بڑھا میں نے کہا صلی علی

Dar O Alam Had Se Badha Mene Kaha Sale Aala

(Tabish Kamal) تابش کمال

دیکھو تو اُن کے نقش قدم ہیں کے پھول ہیں

Dekho Tu Un Ke Naqsh E Qadam Hain Ke Phool Hain

(Tabish Kamal) تابش کمال