Aaina Gard Se Ata Hua Tha

آئینہ گرد سے اٹا ہوا تھا

آئینہ گرد سے اٹا ہوا تھا

آنکھ کا درد بھی گھٹا ہوا تھا

رات بھی دھند کا شکارہوئی

خواب بھی راہ سے ہٹا ہوا تھا

سلسلہ تجھ سے تھا مرا اور میں

ساری دنیا سے ہی کٹا ہوا تھا

داستاں اس پہ تھی مقدر کی

زیست کا جو ورق پھٹا ہوا تھا

سب کے دامن بھرے ہوئے تھے وہاں

درد خیرات میں بٹا ہوا تھا

پیڑ طوفاں کا زور سہہ نہ سکا

ایک پتہ مگر ڈٹا ہوا تھا

بھولنے کا سوال کیا طاہر

میں نے اک شخص کو رٹا ہوا تھا

طاہر حنفی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(494) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Tahir Hanfi, Aaina Gard Se Ata Hua Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 15 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Tahir Hanfi.