Mujhe Tum Ne Kitney Zakham Diye

مجھے تم نے کتنے زخم دیئے

مجھے تم نے کتنے زخم دیئے

مجھے تم نے کتنے غم دیئے

یہ جو اشک میرے برس رہے ہیں

یہ تمہاری ہی تو عنایت ہیں

مجھے تم نے کانٹوں پر لٹا دیا

اور خود آرام سے گزر گئے

مجھے محبتوں نے مٹا دیا

مجھے پتھر کا بنا دیا

میرا غرور پاش پاش ہوا

مجھے تم سے بڑی ہیں شکایتیں

مجھے تم سے بہت ہیں شکوے

مجھے تم نے دل سے نکال دیا

مجھے تم نے پرایا بنا دیا

مجھے رشتوں پہ اپنے ناز تھا بہت

وہ امید پل میں ٹوٹ گئی

مجھے آندھیوں سے ڈر نہیں

مجھے طوفانوں نے بچا لیا

یہ سبق جہاں نے دیا مجھے

کہ نہیں ہے یہاں کوئی تیرا

مجھے سب پہ تھا جو بھروسہ

وہ بھروسہ میرا ٹوٹ گیا

ہر رشتہ جیسے چھوٹ گیا

اب مجھے کسی سے کوئی گلہ نہیں

نہ چاہیئے کسی سے کوئی صلہ

ہاں!

مجھے میری ذات نے گلہ کیا

کہ کدھر ہے تو اور کون ہے تیرا

مجھے یاد ہے سب اسی طرح

ثناء کہ کل کی جیسے بات ہو ..

طیبہ ثناء

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1592) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Tayiba Sana, Mujhe Tum Ne Kitney Zakham Diye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Tayiba Sana.