ْqabil Rashk Bhi Hon Qabil E Tardeed Bhi Hon

ْقابلِ رشک بھی ہوں قابلِ تردید بھی ہوں

ْقابلِ رشک بھی ہوں قابلِ تردید بھی ہوں

میں بیک وقت اندھیرا بھی ہوں خورشید بھی ہوں

میں ہی ہوں سیٹھ کی مغرور ہنسی میں پنہاں

میں ہی مزدور کی حسرت سے بھری دید بھی ہوں

ایک لمحے کو تو اندوہ بھری شب ہوں میں

دوسرے لمحے مسرّت سے سجی عید بھی ہوں

مجھ میں اک دشت ہے اس دشت کا ہر ذرّہ ہے خوف

کہنے کو میں ولیِ گلشنِ توحید بھی ہوں

جب بھی کوئی غلطی ہو تو کھٹکتا ہے دروں

یعنی خود اپنی ہی میں ذات پہ تنقید بھی ہوں

میں وہ پنچھی ہوں جو ہے ڈار میں سب سے آگے

اپنی دھن میں ہوں، تبھی قابلِ تقلید بھی ہوں

جو بھی حق بات ہے، سمجھو کہ وہی بات ہوں میں

پھر میں اس بات کی شدّت بھری تاکید بھی ہوں

عبیدالرحمٰن نیازی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1093) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Ubaid Ur Rehman Niazi, ْqabil Rashk Bhi Hon Qabil E Tardeed Bhi Hon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ubaid Ur Rehman Niazi.