Hamain Tahafuz Ka Khabat Chupne Ki Lat Nahi Thi

ہمیں تحفظ کا خبط، چھُپنے کی لت نہیں تھی

ہمیں تحفظ کا خبط، چھُپنے کی لت نہیں تھی

فلک سے ربط استوار تھا، گھر کی چھت نہیں تھی

میں کاروبارِجنوں کو اب ترک کر چکا ہوں

وہ کام اچھا تھا لیکن اُس میں بچت نہیں تھی

وہ شخص بھی شعر تھا کوئی سہلِ ممتنع میں

نہیں کھلا گر چہ اس کی کوئی پرت نہیں تھی

بہت سا غم اس لئے منافع گھٹا کے بیچا

کیا تھا جتنا درآمد، اتنی کھپت نہیں تھی

ہمارا چہرہ بہت سی آنکھوں کا پِیر ہے اب

وہ آنکھیں جن کو ملال کی معرفت نہیں تھی

اک اور عشق آ گیا تھا دورانِ ہجر، ٹالا

ممانعت تو نہیں تھی، مجھ میں سکت نہیں تھی

بھلا ہو نم کا کہ اک جگہ پر بٹھا دیا ہے

وگرنہ مجھ گرد کی زمیں سے جڑت نہیں تھی

عمیر نجمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1029) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Umair Najmi, Hamain Tahafuz Ka Khabat Chupne Ki Lat Nahi Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Umair Najmi.