Bhare Kamre Main Udasi Ka Asar Tanha Kiya

بھرے کمرے میں اُداسی کا اثر تنہا کیا

بھرے کمرے میں اُداسی کا اثر تنہا کیا

جانے کیا بات تھی کیا سوچ کے گھر تنہا کیا

خود مِیں جھانکا تو مِرے جِسم سے مَربُوط تھا وہ

مَیں نے جس سائے کو تا حدِّ نَظر تنہا کیا

کس اکائی کو بکھرنے دوں کسے جمع کروں؟

کہاں کرنا تھا بدن تنہا ، کدھر تنہا کیا

میرے ملبے کی بچت روز کھٹکتی تھی اُسے

میرے وحشی نے مجھے بارِ دگر تنہا کیا

کتنی مشکل سے بسایا ترا دھڑکا دل میں

جسم آباد نہ ہو جائے اگر تنہا کیا

مجھ خلا زاد میں وہ خالی جگہ چاہتی تھی

کرنا بنتا تو نہ تھا خود کو مگر تنہا کیا

اک نشست اُس کے لیے خالی رکھی وحشت کی

جس کے ہم راہ مَحبت کا سفر تنہا کیا

اُسامہ خالد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(396) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Usama Khalid, Bhare Kamre Main Udasi Ka Asar Tanha Kiya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Usama Khalid.