Qafal Khulain Ge Magarmachoon Ka Moun Khul Jaye Ga

قُفل کھلیں گے اور مگرمچھوں کا منہ کھل جائے گا

قُفل کھلیں گے اور مگرمچھوں کا منہ کھل جائے گا

کیا معلوم اِس دل کے غار سے کیا کیا سامنے آئے گا

دل کی جوانی ڈَھل جائے گی ریت اپنے تَھل جائے گی

اور ہمارا عکس فضا میں سرخ دُھواں بن جائے گا

دیواروں کے بِیچ پڑی ہے بند دریچے کی تصویر

سوچ رہا ہوں اس کمرے میں چور کہاں سے آئے گا

تم نے میرى گَن دیکھى ہے اور بُلٹ سے واقف ہو

اُس کا نام زباں پر لاؤ آج پتہ چل جائے گا

تیر اندازى کرتے کرتے سب کو نیند آ جائے گى

اور سِپہ سالار کا بیٹا ٹینشن سے مر جائے گا

اُسامہ خالد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(310) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Usama Khalid, Qafal Khulain Ge Magarmachoon Ka Moun Khul Jaye Ga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 17 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Usama Khalid.