Ghazal

غزل

وہ جو دکھنے میں تو ریشم کا بدن لگتا ہے

پاس آنے پہ وہی شعلہ سخن لگتا ہے

کیسے اس شخص کے دامن میں پرو دوں کانٹے

وہ جو خوش باش ہے پھولوں کا چمن لگتا ہے

جب سے بازار محبت میں وفا عام ہوئی

تب سے ہر شخص محبت میں مگن لگتا ہے

ہم جسے باتوں ہی باتوں میں غزل کہتے تھے

سچ بتائیں تو وہی جان سخن لگتا ہے

ہم جو صدیوں کا سفر لمحوں میں طے کر آئے

اب وہی لمحہ عمر بھر کی تھکن لگتا ہے

اک تیری یاد جو لے آتی ہے سیلاب کیء

اشک رکتا ہے تو کانٹے سی چبھن لگتا ہے

کروٹوں میں ہی کہیں رات گزر پاتی ہے

میرا بستر تیرے چہرے کی شکن لگتا ہے

ہاں وہ عامر جسے رنگوں سے محبت تھی کبھی

آج ٹوٹے ہوئے خوابوں کا کفن لگتا ہے

عامر خلیل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(500) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Aamir Khalil , Ghazal in Urdu. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aamir Khalil .