Ghazal

غزل

خود آگہی کے باب سے آگے نہیں گئے

ہم روح کے عذاب سے آگے نہیں گئے

کچھ لوگ جنہیں منزلیں بھی ڈھونڈتی رہیں

رستوں کے انتخاب سے آگے نہیں گئے

کچھ ان کہے سوال جو سوچے تمام عمر

اک ان سنے جواب سے آگے نہیں گئے

اب کیا کہیں کہ جس قدر دیوانگی بڑھی

حالات اس حساب سے آگے نہیں گئے

اک زندگی کا خواب تھا جو خواب ہی رہا

سو اک تمہارے خواب سے آگے نہیں گئے

عامر تمہاری شاعری پڑھ کر لگا کہ "لفظ"،

شاعر کے اضطراب سے آگے نہیں گئے

عامر خلیل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(501) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Aamir Khalil , Ghazal in Urdu. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Aamir Khalil .