بند کریں
شاعری ابرار نجمیآہیں دیوار بے اثر خالی
آہیں دیوار بے اثر خالی
شاعر : ابرار نجمی
آہیں دیوار بے اثر خالی
اک شخص کے بعد ہے گھر خالی

شہر کی رونقوں سے کیا لینا
یا ر سے جب ملا شہر خالی

اس کے ہاتھوں میں ہاتھ میرا ہو
اب نہ ہو کوئی بھی پہر خالی

اک چلی گولی پرندوں پر
اور ہو گیا پھر شجر خالی

بات سچی ہی کام آئے گی
جھوٹ رہتا ہے بے اثر خالی

ہل چلا کے کسان افسردہ
پھر زمیں کیوں ہے بے ثمر خالی

طے ہوا تھا نہیں بولنا راہ میں
پوچھنے سے ہوا صبر خالی

ابرار نجمی
ابرار نجمی © جملہ حقوق بحق ادارہ اُردو پوائنٹ محفوظ ہیں۔
© www.UrduPoint.com

(0) ووٹ وصول ہوئے