Mehtaab

مہتاب

پہنائیوں کی خاک ہے اور پیشہ ماہتاب

خاموشیءِ صد آبِ پلک پہ ہے اِک گلاب

خشکی پہ اُلفتوں کے ستارے نہیں گِرے

سنبھلا گیا ہے ہاتھوں کے پیالے میں آفتاب

ہونٹوں کے تیرے چاند ہیں آنکھوں پہ روشنی

تنہا تموّجوں کی شبِ خاک آب آب

کونوں میں آ کے بیٹھ چلی دھوپ گھر مرے

کِس وادیءِ ہراس میں پھینکا گیا گلاب

بارش کی بے بہا مَیں عنایت کے باوجود

دیکھا ہے بُوند بُوند کا اپنے سے اِجتناب

اُلجھن کی پٹڑیوں پہ سرِ گرد مَیں رہا

سُلجھاؤ کی سراؤں میں سویا ہوا سراب

نیندوں کی تنگ بستیاں ، تاروں بھرے سے تھال

آنکھیں ہیں گردِ خواب ، سرھانے کِتابِ خواب

احمد علی کیف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(595) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Ahmed Ali Kaif, Mehtaab in Urdu. Also there are 2 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Ahmed Ali Kaif.