Ghazal

غزل

تم کو جو اعتبار،زرابھی نہیں رھا

ھم کوبھی تم سے پیار،زرابھی نہیں رھا

تجھ کو بھی اب ستاءیں گی جداءی کی الجھنیں

اب تک تو بے قرار،زرابھی نہیں رھا

جانے کیوں بھر گءی ہے آنکھوں میں ریت سی

خوابوں میں وہ خمار زرا بھی نہیں رھا

مرتے تھے آج تک ھم جس کے حجاب پر

وہ شخص پردہ دار،زرا بھی نہیں رھا

یہ سچ ھے میرے دوست،تیری بے رخی کے بعد

ہمیں خود پہ اختیار،زرا بھی نہیں رھا

اصغر جو اک چٹان سا میرا ظبط تھا کبھی

مت پوچھ میرے یار،زرابھی نہیں رھا

محمداقبال ملک

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(427) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of MOHAMMAD IQBAL MALIK, Ghazal in Urdu. Also there are 24 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of MOHAMMAD IQBAL MALIK.