MENU Open Sub Menu

Ghazal

غزل

کوئی رشتہ تیرے پیمان سے جوڑا جائے

اب میرے ہجر کو عنوان سے جوڑا جائے

قصہء حُسن کو کنعان سے جوڑا جائے

عشق کو پھر کسی زندان سے جوڑا

اشک سینے سے روانہ ہوئے آنکھوں کی طرف

ان کی طغیانی کو طوفان سے جوڑا جائے

یہ تو پنچھی ہیں نئی رُت میں پلٹ جایئں گے

ربط کیسے کسی مہمان سے جوڑا جائے

رب نے جنت بھی بنائی ہے اسی کی خاطر

ایک خوش فہمی کو انسان سے جوڑا جائے

تیری تہذےب سے وحشت کو بھی خوف آتا ہے

تیری بستی کو بیابان سے جوڑا جائے

قید ہوتی ہے بھلا ناز کہےں نکہت. گُل

پُھول کو کس لیے گلدان سے جوڑا جائے

نعیم ناز قیصرانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(255) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

نعیم ناز قیصرانی کی مزید شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of NAEEM NAZ QAISRANI, Ghazal in Urdu. Also there are 1 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of NAEEM NAZ QAISRANI.