Kat Gayi Umar To Samajh Aaya

کٹ گئی عمر تو سمجھ آیا

کٹ گئی عمر تو سمجھ آیا

میری آنکھوں میں خواب تیرا تھا

دل کی بنجر زمین پے جاناں

دور بنتا سراب تیرا تھا

ہےسکوں زندگی میں ہر درجہ

ایک واحد عذاب تیرا تھا

تھی کہانی تو میری ملکیت

چرچہ ساری کتاب تیرا تھا

مجھ میں جتنا بھی میرا باقی ہے

وہ تو سارا جناب تیرا تھا

بے وفائی سوال تھی میرا

مسکراہٹ جواب تیرا تھا

گفتگو تھی یا جیسے خوشبو تھی

اُس پے قاتل شباب تیرا تھا

بے وجہ جسکو چھوڑ آئے ہو

بے غرض بے حساب تیرا تھا

نوشین اقبال

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(547) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Nosheen Iqbal, Kat Gayi Umar To Samajh Aaya in Urdu. Also there are 31 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nosheen Iqbal.