Ghazal

غزل

سر پہ خطرہ سہی ٹل سکتا ہے تو چاہے اگر

گھر کا ماحول بدل سکتا ہے تو چاہے اگر ,

بس ذرا رخ سے نقاب اپنے ہٹا کر مجھے دیکھ

یہ چراغ اور بھی جل سکتا ہے تو چاہے اگر، ،

ہاں ترا قرب میسر ہو تو سیگریٹ کا دھواں ، ،

ایک تصویر میں ڈھل سکتا ہے تو چاہے اگر۔ ۔

صرف اسراف میں تھوڑی سی کمی کرنے سے ، ،

ایک گھر اور بھی پل سکتا ہے تو چاہے اگر، ، ،

سُن تری دید سے مشروط ہیں سانسیں میری ۔ ۔

دم گھڑی بھر میں نکل سکتا ہے تُو چاہے اگر ، ،

ترک کر اپنی انا اور گلے مجھ کو لگا۔ ۔ ۔

کوہ ِ برفاب پگھل سکتا ہے تو چاہے اگر۔ ۔ ۔

آج پھر ڈوبنے والے کو پکارے جو شعیب

موج ِ دریا سے اچھل سکتا ہے تو چاہے اگر ، ،

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شعیب الطاف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شعیب الطاف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(431) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Shoaib Altaf, Ghazal in Urdu. Also there are 5 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Shoaib Altaf.