Ghazal

غزل

سر پہ خطرہ سہی ٹل سکتا ہے تو چاہے اگر

گھر کا ماحول بدل سکتا ہے تو چاہے اگر ,

بس ذرا رخ سے نقاب اپنے ہٹا کر مجھے دیکھ

یہ چراغ اور بھی جل سکتا ہے تو چاہے اگر، ،

ہاں ترا قرب میسر ہو تو سیگریٹ کا دھواں ، ،

ایک تصویر میں ڈھل سکتا ہے تو چاہے اگر۔ ۔

صرف اسراف میں تھوڑی سی کمی کرنے سے ، ،

ایک گھر اور بھی پل سکتا ہے تو چاہے اگر، ، ،

سُن تری دید سے مشروط ہیں سانسیں میری ۔ ۔

دم گھڑی بھر میں نکل سکتا ہے تُو چاہے اگر ، ،

ترک کر اپنی انا اور گلے مجھ کو لگا۔ ۔ ۔

کوہ ِ برفاب پگھل سکتا ہے تو چاہے اگر۔ ۔ ۔

آج پھر ڈوبنے والے کو پکارے جو شعیب

موج ِ دریا سے اچھل سکتا ہے تو چاہے اگر ، ،

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ شعیب الطاف ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

شعیب الطاف

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(668) ووٹ وصول ہوئے

Related Poetry

Your Thoughts and Comments

Ghazal by Shoaib Altaf - Read Shoaib Altaf's best Shayari Ghazal at UrduPoint. Here you can read the best poetry Ghazal of Shoaib Altaf. Ghazal is the most famous poetry by emerging poet, Shoaib Altaf. People love to read poetry by Shoaib Altaf, and Ghazal by Shoaib Altaf is best among the poetry collection by new poet Shoaib Altaf.

At UrduPoint, you can find the complete collection of Urdu Poetry of Shoaib Altaf. On this page, you can read Ghazal by Shoaib Altaf. Ghazal is the best poetry by Shoaib Altaf.

Read the Shoaib Altaf's best poetry Ghazal here at UrduPoint; you will surely like it. Many people, who love the Urdu Shayari of the new poet Shoaib Altaf, regard it as the best poetry Ghazal of Shoaib Altaf.

We recommend you read the most famous poetry, Ghazal of emerging poet Shoaib Altaf, here, you will surely love it. Also, don't forget to share it with others.