Ghazal

غزل

تحقیق۔ نور۔ ایزدی، امکانیات ہوں

وسعت پذیر علم ہوں، اسراریات ہوں

ملتا ہے امکانات کو ماحول ساز گار

بحر۔ خمار۔ عشق تو، میں نمکیات ہوں

آب۔ حیات کیمیا کرنے کی بات کر

نہ دیکھ کہ میں بادہ۔ مانع حیات ہوں

تجھ کو ہے کائنات کا ادراک مختلف

ورنہ میں کہکشائوں کی اخلاقیات ہوں

تنصیب ہے "جنون مشینی" دماغ میں

اور میں اسی مشین کی میکانیات ہوں

مانا کہ پیچ دار ہوں، الجھا ہوا ہوں میں

حسن۔ وجود۔ شعر کی میں جینیات ہوں

میں نے جنوں کو فکر کے متوازی کر دیا

دونوں سطور شعر ہیں، میں شعریات ہوں.

دیکھا تھا امکانات سے فردا نکال کر

وہ تجربہ تھا وقت پر، میں باقیات ہوں

گزرا ہوں ممکنات سے، اسراریات سے

واحدؔ یقین ہوگیا! رحمانیات ہوں

وحیداخترواحدؔ

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(706) ووٹ وصول ہوئے

وحیداخترواحدؔ کی مزید شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Poetry of Waheed Akhtar Wahid, Ghazal in Urdu. Also there are 1 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Waheed Akhtar Wahid.