Usay Chuva Hi Nahi Jo Meri Kitaab Mein Tha

اسے چھوا ہی نہیں جو مری کتاب میں تھا

اسے چھوا ہی نہیں جو مری کتاب میں تھا

وہی پڑھایا گیا مجھ کو جو نصاب میں تھا

وہی تو دن تھے اجالوں کے پھول چننے کے

انہیں دنوں میں اندھیروں کے انتخاب میں تھا

بس اتنا یاد ہے کوئی بگولا اٹھا تھا

پھر اس کے بعد میں صحرائے اضطراب میں تھا

مری عروج کی لکھی تھی داستاں جس میں

مرے زوال کا قصہ بھی اس کتاب میں تھا

بلا کا حبس تھا پر نیند ٹوٹتی ہی نہ تھی

نہ کوئی در نہ دریچہ فصیل خواب میں تھا

بس ایک بوند کے گرتے ہی ہو گیا آزاد

وہ ہفت رنگ اجالا جو مجھ حباب میں تھا

وکاس شرما راز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(385) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of VIKAS SHARMA RAAZ, Usay Chuva Hi Nahi Jo Meri Kitaab Mein Tha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of VIKAS SHARMA RAAZ.